جسٹس ریٹائرڈ سعید الزماں صدیقی کی زندگی پر ایک نظر

سعیدالزماں صدیقی یکم دسمبر1937ء کو لکھنؤ میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم لکھنوسےحاصل کی۔1954ء میں ڈھاکہ یونیورسٹی سےانجینئرنگ میں گریجویشن کی۔ جامعہ کراچی سے 1958ء میں وکالت کی ڈگری لی۔ 196ء میں بارسےوابستہ ہوئےاور1963ء میں مغربی پاکستان ہائیکورٹ میں انرول ہوئے۔ 1969ء میں سپریم کورٹ سے جڑگئے۔ وہ بارکے مختلف عہدوں پربھی فرائض انجام دیتے رہے۔ کراچی ہائی کورٹ بار کے جوائنٹ سیکریٹری منتخب ہوئے۔ 1980ء میں سندھ ہائیکورٹ کے جج اور1990ء میں چیف جسٹس بنے۔ 1992ء میں سپریم کورٹ کا حصہ بنے۔ یکم جولائی انہوں نےچیف جسٹس آف پاکستان کاعہدہ سنبھالا ۔ 26 جنوری 2000ء کوپرویزمشرف دورمیں پی سی او کےتحت دوبارہ حلف اٹھانےسےانکار کیا اور عہدہ چھوڑ دیا ۔ سابق گورنر سندھ عشرت العباد خان نےسندھ کےطویل ترین گورنرکاریکارڈ قائم کیا۔دوسری جانب گورنرسندھ عشرت العباد خان نےگورنرشپ پررہنےکانیاریکارڈ قائم کیا ۔ عشرت العباد خان 2 مارچ 1963ء کوپیداہوئے۔ ڈاؤ میڈیکل کالج کراچی سےگریجویشن کی اوراسی کالج میں طلباتنظیم اے پی ایم ایس او سے سیاسی سفرکاآغازکیا اور پھرتعلیم مکمل کرکے ایم کیو ایم سےوابستہ ہوگئے۔ 1990ء میں سندھ کےوزیرہاؤسنگ اینڈ ٹاؤن پلاننگ بنائے گئے ۔ کراچی آپریشن شروع ہوا تو لندن جا کر سیاسی پناہ لےلی ، جہاں انہیں برطانوی شہریت بھی مل گئی ۔ 2002ء میں ان کی کراچی واپسی گورنرسندھ کی نامزدگی کےبعد ہوئی۔ 27 دسمبرکو پاکستان کے کم عمر ترین گورنرسندھ کا حلف اٹھایا۔ عشرت العباد نے 27 جون 2011ء کواستعفیٰ دیا جو منظور نہ ہوا ، جس کےبعد 19 جولائی سے دوبارہ ذمہ داریاں سنبھال لیں ۔ 22 اپریل 2015ء کو ایم کیو ایم نےعشرت العباد سےلاتعلقی کااعلان کردیا ۔ عشرت العباد نے مصالحت کار کےطورپر شہرت پائی لیکن مصطفی کمال سے ان کی سیاسی جھڑپ کےمعاملات خراب کر دیئے اور ان کی طویل ترین گورنر شپ کا سفر ختم ہو گیا ۔

You might also like More from author

Leave A Reply

Your email address will not be published.